بلوچستان : خوفناک زلزلے نے تباہی مچا دی ، 22 افراد جاں بحق 300 زخمی

بلوچستان کے مختلف علاقوں میں آنے والے شدید زلزلہ کے باعث 22 افراد جاں بحق اور300سے زائد زخمی ہوگئے. صوبے کے مختلف علاقوں کوئٹہ، سبی، ہرنائی، پشین، قلعہ سیف اللہ ، چمن، زیارت اور ژوب سمیت کئی علاقوں میں رات 3 بج کر 2 منٹ پر زلزلے کے شدید جھٹکے محسوس کیے گئے۔

زلزلہ پیما مرکز کے مطابق زلزلے کی شدت 5.9 ریکارڈ کی گئی جبکہ زلزلے کا مرکز ہرنائی سے 15 کلو میٹر دور کا علاقہ تھا، دو سو سے زائد مکانات ملبے کا ڈھیر بن گئے، علاقے میں امدادی سرگرمیاں جاری ہیں۔ پروو نشل ڈیزاسٹر میجنمنٹ اتھارٹی (پی ڈی ایم اے) بلوچستان کا کہنا ہے کہ زلزلے کے باعث مکانات کے ملبے تلے دب کر 22 افراد جاں بحق اور 300 سے زائد زخمی ہوئے۔ ڈپٹی کمشنر ہرنائی کا کہنا ہے کہ ہرنائی میں کئی عمارتوں کو نقصان پہنچا ہے جبکہ ملبے تلے کئی افراد دبے ہوئے ہیں اور علاقے میں بجلی کی فراہمی بھی معطل ہوگئی ہے۔
ڈپٹی کمشنر کے مطابق لیویز اور ریسکیو ٹیمیں لوگوں کی مدد کیلئے روانہ کر دی گئیں ہیں اور لوگوں کو ہیلی کاپٹر کی مدد سے محفوظ مقامات پر منتقل کیا جا رہا ہے۔

ڈی جی پی ڈی ایم اےنصیرناصر نے میڈیا کو بتایا کہ جاں بحق افراد میں بچوں کی تعداد زیادہ ہے، ہرنائی شہر کےمضافات میں زیادہ نقصان ہواہے۔ وزیراعلیٰ کی ہدایت پراسپتالوں میں ایمرجنسی نافذ ہے۔ ضلعی انتظامیہ کے مطابق ہرنائی ٹو سنجاوی روڈ پہاڑی تودہ گرنے سے بند ہوگئی، پانچ میل ندی کے مقام پر متاثرہ سڑک کی بحالی کا کام جاری ہے چند گھنٹوں میں راستے بحال کردیئے جائیں گے۔ وزیرداخلہ بلوچستان ضیاء لانگو نے بتایا کہ زلزلے سے سب سے زیادہ نقصان ہرنائی کے علاقے میں ہوا ہے، منہدم مکانات میں اب بھی بہت سےافراد کے دبے ہونے کی اطلاعات ہیں۔

ضیالانگو کا کہنا ہے کہ 100زخمیوں میں سے15سے20افراد کی حالت انتہائی تشویشناک ہے۔ زیارت اور قلعہ سیف اللہ میں بھی نقصانات ہوئے ہیں، لینڈ سلائیڈنگ سے بند ہونے والے 50فیصد راستوں کو کھول دیا گیا ہے، امدادی کام جاری ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں